فلائی ناس كى بین الاقوامی وسعت پاکستان تک

ریاض – 11 فروری فلائى ناس نے 15 فروری 2018 سے سعودی عرب اور پاکستان کے درمیان نئی پروازوں کو شروع كرنےکا اعلان کیا ہے۔   سعودى عرب اور پاکستان کے درمیان علاقائی رابطوں کو بهتر بنانے كے سلسلے میں  فلائی ناس نے نئی منزلوں تک  پروازوں کے آغاز کر نے كا فيصله كيا ہے۔ (Logo: http://photos.prnewswire.com/prnh/20161004/414891LOGO ) […]

ریاض – 11 فروری

فلائى ناس نے 15 فروری 2018 سے سعودی عرب اور پاکستان کے درمیان نئی پروازوں کو شروع كرنےکا اعلان کیا ہے۔   سعودى عرب اور پاکستان کے درمیان علاقائی رابطوں کو بهتر بنانے كے سلسلے میں  فلائی ناس نے نئی منزلوں تک  پروازوں کے آغاز کر نے كا فيصله كيا ہے۔

(Logo: http://photos.prnewswire.com/prnh/20161004/414891LOGO )

ان پروازوں کے لئے جدید اور یکتا سہولیات سے مزین ایربس 320 اور بوینگ 767    طیارےاستعمال کئے جائیں گے۔ بکنگ کے لئے بکنگ ایجنٹ کے علاوہ سمارٹ فون اور فلائی ناس کی ویب سائٹ کی سہولت بھی دستیاب ہو گی –

فلائی ناس مندرجہ بالا پروازوں کے علاوہ  زائیرین حج و عمرہ کے لئے  بھی خصوصی کشش رکھتا ہے – فلائى ناس  کام یا حج اور عمرہ کے لئے سعودی عرب کے مسافروں کی خدمت کرتی ہے، اور یہ مسافروں کے لئے مزید سہولیات فراہم کرے گی تا کہ بہت آسانی سے سعودی عرب کے مختلف علاقوں تک پہنچ سكيں- مزید براں اندرون ملک (سعودى عرب) کے مختلف 17 شہروں تک فوری  رسائی کے لئے فلائی ناس کی مزيد پروازیں بهى دستیاب ہوں گی ۔

اپنے بین الاقوامی توسیعی منصوبے  کے سلسلہ میں فلائی ناس کے چیف ایگزیکیٹو آفیسر بندر المهنا ا پنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے فرماتے ہیں “ہم اپنے معزز مسافروں کی ضروریات   کے مطابق اپنے دائرہ کار کو بڑھاتے رہیں گے،حالیاً ہم ایشیا اور افریقہ میں نئی منزلوں کو پانے کے عمل سے گذر رہے ہیں-  2017 میں ہم  کانو ،  نائیجیریا تک رسائی حاصل کر چُکے ہیں  اور 2018 میں پاکستان ، انڈیا اور الجیریا کے مختلف شہروں تک پہنچیں  گے”

ہمارا عہد ہے که سال  2018 همارى بین الاقوامى وسعتوں اور  نئی منزلوں  کے حصول کا سال ثابت ہو گا،  ہم یہ بھی وعدہ کرتے ہیں کے فلائی ناس نے گذشتہ 10 سال میں جو معیارقائم کيا ہے اسے برقرار رکھا جائے گا۔

فلائی ناس مندرجہ ذیل پروازوں کا آغاز کر رہا ہے :

15 فروری 2018 سے  ریاض – لاہور اور  ریاض – اسلام آباد

15 فروری 2018 سے  دمام – لاہور

17 فروری 2018 سے  جدہ –لاہور

فلائى ناس کے بارے میں:

فلائى ناس ایک سعودی قومی ایئر لائن ہے، جس میں 30 ائربس A320 طیارے کے بیڑے كو دو كلاسوں کے ساتھ ڈیزائن کیا گیا ہے: بزنس کلاس اور اكانومى کلاس-  اور ہفتے ميں 1000 سے زيادہ پروازيں مملكت  کے اندر مختلف  17 شهروں اور 17 بين الاقوامی منزلوں تک  جاتى هيں ۔ 2007 ء میں فلائى ناس کے آغاز سے، فلائى ناس نے 32 کروڑ سے زائد مسافروں كى ریاض، جدہ، دمام اور ابہا کے اہم ہوائی اڈوں سے کامیابی سے خدمت کی ہے۔
فلائى ناس بہترین قیمتوں پر بہترین خدمات فراہم کرنے کى خواہاں ہے اور اس كى  سپر کسٹمر سروس کے نتیجے میں فلائى ناس نے مسلسل تين سالوں 2015، 2016 اور 2017 کے لئے مشرق وسطی میں بہترین کم قیمت ایئر لائن کا  ورلڈ ٹریول ایوارڈز كا اعزاز حاصل کیا ہے اور  2017  سکائى ٹریکس “Skytrax” کا ایوارڈ بھی حاصل کيا۔

مزید معلومات کے لئے،  فلائى ناس ویب سائٹ پر جائیں:

 www.flynas.com

‫دراسة جيمالتو ومعهد بونيمون: ظهور فجوات كبيرة بين البلدان بخصوص التوجهات بشأن حماية البيانات في السحابة الحاسوبية

الدراسة تكشف تباينات إقليمية في اعتماد الأمن السحابي: تضاعف احتمالية تأمين الشركات الألمانية للمعلومات السرية أو الحساسة في السحابة بنسبة (61٪) مقارنة بالمؤسسات البريطانية بنسبة (35٪)، والبرازيلية بنسبة (34٪) واليابانية بنسبة (31٪) تعتقد نصف المنظمات العالمية أن معلومات الدفع (54٪) وبيانات العملاء (49٪) معرضة للخطر في السحابة يعتقد أكثر من النصف (57٪) بأن استخدام السحابة […]

  • الدراسة تكشف تباينات إقليمية في اعتماد الأمن السحابي: تضاعف احتمالية تأمين الشركات الألمانية للمعلومات السرية أو الحساسة في السحابة بنسبة (61٪) مقارنة بالمؤسسات البريطانية بنسبة (35٪)، والبرازيلية بنسبة (34٪) واليابانية بنسبة (31٪)
  • تعتقد نصف المنظمات العالمية أن معلومات الدفع (54٪) وبيانات العملاء (49٪) معرضة للخطر في السحابة
  • يعتقد أكثر من النصف (57٪) بأن استخدام السحابة يزيد من مخاطر الامتثال

دبي، الإمارات 16 يناير 2018– تكشف جيمالتو، الرائدة على مستوى العالم في مجال الأمن الرقمي، اليوم عن أن الغالبية العظمى من الشركات العالمية (95٪) قد اعتمدت الخدمات السحابية[1] وأن هناك فجوة واسعة في مستوى الاحتياطات الأمنية التي تطبقها الشركات في الأسواق المختلفة. وقد أقرت المنظمات أنه يتم فقط تأمين خُمسي (40٪) البيانات المخزنة في السحابة عن طريق التشفير والحلول الإدارية الرئيسية.Picture.jpg

وقد أظهرت النتائج – وهي جزء من تكليف جيمالتو لمعهد بونيمون للقيام “بدراسة أمن البيانات السحابية العالمية لعام 2018” – أن المؤسسات في المملكة المتحدة (35%) والبرازيل (34%) واليابان (31%) أقل حذرًا من تلك الموجودة في المانيا (61%) عند مشاركة المعلومات السرية والحساسة المخزنة على السحابة مع الأطراف الخارجية. وقد استطلعت الدراسة آراء أكثر من 3,200 من المستخدمين لتقنية المعلومات في جميع أنحاء العالم من أجل التوصل إلى فهم أفضل للاتجاهات الرئيسية في إدارة البيانات والممارسات الأمنية للخدمات القائمة على السحابة.

تتسع ريادة ألمانيا في مجال أمن السحابة الحاسوبية لتشمل تطبيق ضوابط مثل التشفير والترميز. وقد كشفت الأغلبية (61٪) من المؤسسات الألمانية أنها تؤمِّن معلومات حساسة أو سرية خلال تخزينها في البيئة السحابية، متقدمةً على الولايات المتحدة (51٪) واليابان (50٪). ويزداد مستوى الأمن المطبق عندما تُرسل الشركة البيانات أو تتلقاها، بحيث يرتفع إلى 67% بالنسبة لألمانيا و(62%) بالنسبة لليابان ويليهما في الترتيب الهند بنسبة (61%).

وبالرغم من ذلك، تُدرك أكثر من ثلاثة أرباع (77٪) المؤسسات في جميع أنحاء العالم أهمية تنفيذ حلول التعمية، مثل التشفير. ومن المتوقع أن تزداد هذه النسبة فيما بعد، حيث يعتقد تسعة من كل 10 (91٪) أن هذه الإمكانية سوف تصبح أكثر أهمية على مدى العامين المقبلين – زيادة بنسبة 86٪ مقارنة بالعام الماضي.

إدارة الخصوصية والتنظيم في السحابة

على الرغم من تزايد اعتماد الحوسبة السحابية والفوائد التي تجلبها، يبدو أن المنظمات العالمية لا زالت تتوخى الحذر. ومما يثير القلق أن نصف المؤسسات تعتقد أن معلومات الدفع (54٪) وبيانات العملاء (49٪) معرضة للخطر عند تخزينها في السحابة. وتعتقد أكثر من نصف المؤسسات العالمية (57٪) أن استخدام السحابة يجعلها أكثر عرضة لانتهاك الخصوصية ولوائح حماية البيانات، بانخفاض بسيط من 62٪ في عام 2016.

تعتقد جميع المؤسسات تقريبًا (88٪) أنه بسبب هذا الخطر المتصور فإن اللائحة العامة الجديدة لحماية البيانات ستتطلب إجراء تغييرات في الحوكمة السحابية، حيث أكد اثنان من أصل خمسة (37٪) أنها تتطلب تغييرات كبيرة. وإلى جانب الصعوبة في تلبية المتطلبات التنظيمية، ذكر ثلاثة أرباع المشاركين على مستوى العالم (75٪) أن إدارة لوائح حماية البيانات والخصوصية أكثر تعقيدًا في البيئة السحابية مقارنة بالشبكات المحلية بنسبة (97٪) في فرنسا و(87٪) في الولايات المتحدة وتأتي الهند بعدهما بنسبة (83٪).

الاتجاه إلى استخدام النظم السحابية

على الرغم من انتشار استخدام نظام السحابة، وجدت الدراسة أن هناك فجوة في الوعي داخل الشركات حول الخدمات المستخدمة. ولم يكشف سوى ربع (25%) المستخدمين لتكنولوجيا المعلومات عن ثقتهم التامة من معرفتهم بجميع الخدمات السحابية التي تستخدمها الشركات الخاصة بهم، مع ثقة الثلث (31%) في معرفتهم بتلك الخدمات.

وعند إمعان النظر في ذلك، قد تظل تقنية معلومات “الظل” في فرض تحديات على المستخدمين. فهناك أكثر من نصف الشركات الأسترالية (61%) والبرازيلية (59%) والبريطانية (56%) غير واثقين من معرفتهم بجميع تطبيقات الحوسبة السحابية، أو المنصات أو خدمات البنية التحتية التي تستخدمها الشركة. وتزداد الثقة في أماكن أخرى، حيث لا يوجد سوى قرابة الربع في ألمانيا (27%) واليابان (27%) وفرنسا (25%) ممن يفتقرون إلى الثقة في هذا الصدد.

ولحسن الحظ، فإن الغالبية العظمى (81%) يعتقدون أن القدرة على استخدام أساليب مصادقة قوية للوصول إلى البيانات والتطبيقات في نظام السحابة أمر ضروري أو في غاية الأهمية. والشركات في أستراليا هي الأكثر حرصًا على تطبيق المصادقة، حيث يرى 92% أنها سوف تساعد الأشخاص المصرح لهم فقط على الوصول إلى بعض البيانات والتطبيقات المحددة في السحابة، متقدمة بذلك على الهند (85%) واليابان (84%).

يشير سيباستيان بافي، الرئيس التقني لحماية البيانات في Gemalto، قائلاً “في حين أنه من الجيد أن نرى بعض الدول مثل ألمانيا تأخذ مسألة الأمن السحابي على محمل الجد، إلا أن هناك اتجاه مثير للقلق يظهر في مكان آخر”. وأضاف “قد يرى ما يقرب من النصف أن السحابة تجعل من عملية حماية البيانات أمرًا أكثر صعوبة، في حين أن العكس هو الصحيح.

“إن فوائد السحابة تتمثل في الراحة وإمكانية التطوير والتحكم في التكلفة عند تقديم خيارات للشركات التي لن تكون لديها القدرة على الوصول إلى تلك الخدمات أو تحمل تكاليفها، لا سيما عندما يتعلق الأمر بالأمن. إلا أنه وفي حين أصبحت عملية تأمين البيانات أكثر سهولة، فإنه لا ينبغي أبدًا افتراض أن اعتماد السحابة يعني أن المعلومات يتم تأمينها بطريقة تلقائية. ويمكنك إلقاء نظرة فقط على الاختراقات التي حدثت مؤخرًا في شركات أكسنتشر وأوبر كمثالين على بيانات في السحابة الحاسوبية تُركت معرضة للمخاطر. وبغض النظر عن المكان الذي توجد به البيانات، يجب استخدام الضوابط المناسبة مثل التشفير والترميز مع مصدر البيانات. وبمجرد القيام بذلك، سوف تنتهي أي مشكلة تتعلق بالامتثال”.

منهجية البحث

تولى معهد بونيمون Ponemon Institute إجراء هذا البحث بالنيابة عن جيمالتو مع 3,285 من مستخدمي تقنية المعلومات الذين شملهم الاستطلاع في الولايات المتحدة (575) والمملكة المتحدة (405) وأستراليا (244) وألمانيا (492) وفرنسا (293) واليابان (424 ) والهند (497) والبرازيل (355).

المصادر

نبذة عن جيمالتو

شركة جيمالتو (المدرجة في بورصة يورونيكست تحت الرمز NL0000400653 GTO) هي الشركة الرائدة عالمياً في مجال الأمن الرقمي، بعائدات سنوية بلغت 3.1 مليار يورو في عام 2016 وعملاء في أكثر من 180 بلداً. نحن نحقق الثقة في عالم متزايد الترابط.

من البرمجيات الآمنة إلى القياسات البيومترية وعمليات التشفير، تمكّن تقنياتنا وخدماتنا الشركات والحكومات من التحقق من الهويات وحماية البيانات كي تبقى آمنة كما أنها تمكّن الخدمات في الأجهزة الشخصية، والكيانات المرتبطة والسحابة الحاسوبية وما بينها.

تقع حلول جيمالتو في القلب من الحياة العصرية، من عمليات الدفع إلى أمن المؤسسات وإنترنت الأشياء. فنحن نتحقق من هوية الأشخاص، والمعاملات والكيانات، والبيانات المشفرة ونخلق قيمة للبرمجيات – بحيث نمكّن عملاءنا من تقديم خدمات رقمية آمنة لمليارات الأفراد والأشياء.

لدينا أكثر من 15,000 موظف يعملون انطلاقاً من 112 مكتباً، و43 مركزاً للتخصيص والبيانات، و30 مركز أبحاث وبرمجيات في 48 دولة.

للمزيد من المعلومات، قم بزيارة www.gemalto.com، أو تابعنا على تويتر عبر @gemalto.

مسؤولو الاتصالات الإعلامية في جيمالتو:

توري كوكس
أمريكا الشمالية
3916 257 512 1+
tauri.cox@gemalto.com
صوفي دومبريس
أوروبا والشرق الأوسط وأفريقيا
38 57 36 55 42 4 33+
sophie.dombres@gemalto.com
جاسلين هوانغ
منطقة آسيا والمحيط الهادئ
3005 6317 65+
jaslin.huang@gemalto.com
نريكيتا سيدانو
أمريكا اللاتينية
5521221422 52+
enriqueta.sedano@gemalto.com

[1] https://www.rightscale.com/lp/2017-state-of-the-cloud-report?campaign=70170000000vFyc

لا يُعتبر نص هذا الإصدار الصحفي المُترجم صيغة رسمية بأي حال من الأحوال. النسخة الموثوقة الوحيدة هي الصادرة بلغتها الأصلية وهي الإنجليزية، وهي التي يُحتكم إليها في حال وجود اختلاف مع الترجمة.

‫شركة Gemalto تُدشّن أول بطاقة بيومترية EMV للمدفوعات اللاتلامسية

المصادقة البيومترية تحل محل كود التعريف الشخصي، مما يعمل على تسهيل المعاملات اللاتلامسية ذات القيمة الأعلى ضمان أقصى حماية شخصية عن طريق عمليات التسجيل الآمنة داخل الفروع وتخزين البيانات البيومترية الحساسة على البطاقة لا توجد مشكلات بشأن عمر البطارية – إذ يتم تشغيل بطاقة المجسات البيومترية عن طريق وحدة الدفع أمستردام، 4 يناير 2018 – […]

  • المصادقة البيومترية تحل محل كود التعريف الشخصي، مما يعمل على تسهيل المعاملات اللاتلامسية ذات القيمة الأعلى
  • ضمان أقصى حماية شخصية عن طريق عمليات التسجيل الآمنة داخل الفروع وتخزين البيانات البيومترية الحساسة على البطاقة
  • لا توجد مشكلات بشأن عمر البطارية – إذ يتم تشغيل بطاقة المجسات البيومترية عن طريق وحدة الدفع

أمستردام، 4 يناير 2018 – وقع الاختيار على شركة Gemalto، الرائدة على مستوى العالم في مجال الأمن الرقمي (والمسجلة في بورصة يورونيكست تحت الرمز NL0000400653 GTO)، من جانب بنك Bank of Cyprus لتوفير أول بطاقة للدفع ذات الواجهات البيومترية المزدوجة EMV  على مستوى العالم للمدفوعات التلامسية وغير التلامسية. يمكن استخدام تقنية التعرف على بصمة الإصبع بدلاً من كود التعريف الشخصي لمصادقة حامل البطاقة، حيث إن البطاقة متوافقة مع محطات الدفع الحالية المثبتة بالفعل في الدولة. عندما يضع العملاء بصمة الإصبع على المجس، يتم أداء مقارنة بين بصمة الإصبع الممسوحة ضوئياً والبيانات البيومترية المرجعية المخزنة بشكل آمن على البطاقة.
تعمل بطاقة المجسات البيومترية عن طريق محطة الدفع ولا تتطلب بطارية مدمجة؛ وهذا يعني عدم وجود قيود جراء عمر البطارية أو عدد المعاملات.

حل بيومتري وعملية تسجيل مصممتان لضمان أمثل لخصوصية المستخدم

تقوم بطاقة الدفع المزودة بمجسات بيومترية الخاصة بشركة Gemalto على مبدأ أن البيانات البيومترية يجب أن تظل دائماً في أيدي المستخدمين النهائيين. سوف يُكمل عملاء بنك Bank of Cyprus عملية التسجيل السريعة في فروع البنك، باستخدام تابلت Gemalto المصمم لهذا الحل. ولقد روعي في تصميم عملية تخصيص البيانات البيومترية وتفعيل البطاقة أن يغنيا عن نقل البيانات البيومترية عبر الأثير لضمان حماية سرية البيانات. يتم تخزين نموذج بصمة الإصبع الذي تم التقاطه أثناء عملية التسجيل على البطاقة فقط.Picture.jpg

وفي معرض تعليقه على هذه المناسبة، قال Bertrand Knopf، نائب الرئيس التنفيذي للمعاملات البنكية والدفع لدى شركة Gemalto، “سيكون عملاء بنك Bank of Cyprus أول من يستمتع بسهولة المعاملات البيومترية باستخدام بطاقات الدفع اللاتلامسية على مستوى العالم” وأضاف “روعي في تصميم بطاقة الدفع المزودة بمجسات بيومترية من شركة Gemalto لتوفير أقصى قدر من الحماية وسرية البيانات. يعد استخدام البيانات البيومترية لعمليات الدفع اللاتلامسية عملية طبيعية حيث إنه يتواءم بشكل طبيعي مع الإيماءة المستخدمة للدفع. وهو يتيح تجربة مستخدم أفضل، مما يتيح مقدارًا أعلى من المعاملات دون إدخال رقم التعريف الشخصي مع الاستفادة من السهولة التي توفرها العمليات اللاتلامسية”.

وفي هذا الصدد، قال Stelios Trachonitis، مدير مركز البطاقات من BOC، “في سبيل إتاحة عملية مصادقة سلسة لقطاع المعاملات البنكية، استفادت Gemalto من خبرتها العريضة مع الوثائق الحكومية الآمنة والقيادة في المعاملات البيومترية” وتابع “سوف يستفيد عملاؤنا من حل الدفع المبتكر هذا مع راحة البال بأن بياناتهم البيومترية لن تغادر يديهم”.

شركة جيمالتو

(المدرجة في بورصة يورونيكست تحت الرمز NL0000400653 GTO) هي الشركة الرائدة عالمياً في مجال الأمن الرقمي، بعائدات سنوية بلغت 3.1 مليار يورو في عام 2016 وعملاء في أكثر من 180 بلداً. نحن نحقق الثقة في عالم متزايد الترابط.

من البرمجيات الآمنة إلى القياسات البيومترية وعمليات التشفير، تمكّن تقنياتنا وخدماتنا الشركات والحكومات من التحقق من الهويات وحماية البيانات كي تبقى آمنة كما أنها تمكّن الخدمات في الأجهزة الشخصية، والكيانات المرتبطة والسحابة الحاسوبية وما بينها.

تقع حلول جيمالتو في القلب من الحياة العصرية، من عمليات الدفع إلى أمن المؤسسات وإنترنت الأشياء. فنحن نتحقق من هوية الأشخاص، والمعاملات والكيانات، والبيانات المشفرة ونخلق قيمة للبرمجيات – بحيث نمكّن عملاءنا من تقديم خدمات رقمية آمنة لمليارات الأفراد والأشياء.

لدينا أكثر من 15,000 موظف يعملون انطلاقاً من 112 مكتباً، و43 مركزاً للتخصيص والبيانات، و30 مركز أبحاث وبرمجيات في 48 دولة.

للمزيد من المعلومات، قم بزيارة www.gemalto.com، أو تابعنا على تويتر عبر @gemalto.

مسؤولو الاتصالات الإعلامية في جيمالتو:

توري كوكس
أمريكا الشمالية
3916 257 512 1+
tauri.cox@gemalto.com
صوفي دومبريس
أوروبا والشرق الأوسط وأفريقيا
38 57 36 55 42 4 33+
sophie.dombres@gemalto.com
جاسلين هوانغ
منطقة آسيا والمحيط الهادئ
3005 6317 65+
jaslin.huang@gemalto.com
إنريكيتا سيدانو
أمريكا اللاتينية
5521221422 52+
enriqueta.sedano@gemalto.com

لا يُعتبر نص هذا الإصدار الصحفي المُترجم صيغة رسمية بأي حال من الأحوال. النسخة الموثوقة الوحيدة هي الصادرة بلغتها الأصلية وهي الإنجليزية، وهي التي يُحتكم إليها في حال وجود اختلاف مع الترجمة.

‫تقنية eSIM من شركة Gemalto تُمكِّن تجربة Always Connected2 لأجهزة Microsoft Surface Pro الجديدة المزودة بتقنية LTE Advanced

 الدمج المتقدم لتقنية eSIM في نظام التشغيل Windows 10 يحقق تجربة مستخدم مُحسنة أمستردام 7 ديسمبر 2017 – تقوم شركة Gemalto، الرائدة على مستوى العالم في مجال الأمن الرقمي، بتوريد حل eSIM (بطاقات SIM المدمجة) لأجهزة Surface Pro من Microsoft المزودة بتقنية LTE Advanced، أجهزة اللاب توب الأكثر تواصلاً في فئتها1 والتي سيبدأ شحنها إلى […]

 الدمج المتقدم لتقنية eSIM في نظام التشغيل Windows 10 يحقق تجربة مستخدم مُحسنة

أمستردام 7 ديسمبر 2017 – تقوم شركة Gemalto، الرائدة على مستوى العالم في مجال الأمن الرقمي، بتوريد حل eSIM (بطاقات SIM المدمجة) لأجهزة Surface Pro من Microsoft المزودة بتقنية LTE Advanced، أجهزة اللاب توب الأكثر تواصلاً في فئتها1 والتي سيبدأ شحنها إلى مختلف المناطق إلى العملاء من الشركات في ديسمبر 2017. تجدر الإشارة إلى أن شراكة Gemalto مع Microsoft مكّنت Surface من أن يصبح أول حاسوب متكامل مزود ببطاقات SIM في منظومة Windows.Picture2.png

تدعم تقنية Gemalto المتقدمة التنشيط السلس لاشتراكات الهواتف الجوالة لمستخدمي أجهزة Surface Pro المبتكرة المزودة بتقنية LTE Advanced. وهذه التجربة السلسة تستفيد من حل إدارة الاشتراكات عن بعد من شركة Gemalto بالتعاون مع Windows 10. هذا ويتوقع عملاء Surface  أن توفر منتجاتهم تقنية متقدمة وبفضل حل eSIM المتقدم من Gemalto، أصبحت كافة خيارات الاتصال الممكنة متاحة بشكل جاهز، وهذا يشمل شراء البيانات الخليوية من الجهاز نفسه.

يتكامل حل eSIM من Gemalto مع Windows 10 على نحو يتفق مع مواصفات توفير بيانات SIM عن بعد عن طريق اتحاد GSMA. وهذا التكامل يُمكّن حل Gemalto من توفير نموذج خدمة متكاملة بحيث تكون خصائص التصحيح وإدارة دورة الحياة متاحة مع تطور التقنيات والمعايير بمرور الوقت. تعمل هذه الإمكانيات على تمديد وعد القيمة الذي تقدمه أجهزة Surface حيث ستتوفر خبرات وقدرات جديدة للمشترين الحاليين لأجهزة Surface Pro المزودة بتقنية LTE Advanced.

وفي معرض تعليقه على هذه المناسبة، قال Paul Bischof، مدير إدارة برامج الأجهزة في شركة Microsoft “عملت أجهزة Surface Pro على إعادة تعريف فئة اللاب توب”. وأضاف “إن تقنية eSIM من Gemalto تساعدنا على تجسيد رؤيتنا بتوفير تجربة عملاء متكاملة”.Picture1.png

وفي الصدد ذاته، قال Frédéric Vasnier، نائب الرئيس التنفيذي لخدمة الهواتف الجوالة وإنترنت الأشياء لدى شركة Gemalto “إن إقرار تقنية eSIM تتنامى بسرعة. يدرك مشغلو الهواتف الجوالة إمكانيات التواصل السلس وزيادة الشعور بالراحة كطريقة لتوسيع نطاق تواصل العملاء إلى أجهزة إضافية”. وأضاف “نحن في بداية تحول تكنولوجي هائل وأجهزة Surface Pro المزودة بتقنية LTE Advanced ليست سوى البداية”.

بيانات إخلاء المسؤولية:

  1. مقارنة النطاقات المدعومة وسرعة المودم بأجهزة Surface Pro المزودة بتقنية LTE Advanced مقابل أجهزة اللاب توب المزودة بتقنية LTE مقاس 12 بوصة و13 بوصة وأجهزة الكمبيوتر 2 في 1. يخضع توافر الخدمة والأداء لشبكة مقدمي الخدمات. يرجى الاتصال بمقدم الخدمات للاطلاع على مزيد من التفاصيل والتوافق والأسعار والتفعيل. راجع جميع المواصفات والترددات على الموقع الإلكتروني com.
  2. يخضع توافر الخدمة والأداء لشبكة مقدمي الخدمات.  يرجى الاتصال بمقدم الخدمات للاطلاع على مزيد من التفاصيل والتوافق والأسعار والتفعيل.  راجع جميع المواصفات والترددات على الموقع الإلكتروني com.

 نبذة عن جيمالتو

شركة جيمالتو (المدرجة في بورصة يورونيكست تحت الرمز NL0000400653 GTO) هي الشركة الرائدة عالمياً في مجال الأمن الرقمي، بعائدات سنوية بلغت 3.1 مليار يورو في عام 2016 وعملاء في أكثر من 180 بلداً. نحن نحقق الثقة في عالم متزايد الترابط.

من البرمجيات الآمنة إلى القياسات البيومترية وعمليات التشفير، تمكّن تقنياتنا وخدماتنا الشركات والحكومات من التحقق من الهويات وحماية البيانات كي تبقى آمنة كما أنها تمكّن الخدمات في الأجهزة الشخصية، والكيانات المرتبطة والسحابة الحاسوبية وما بينها.

تقع حلول جيمالتو في القلب من الحياة العصرية، من عمليات الدفع إلى أمن المؤسسات وإنترنت الأشياء. فنحن نتحقق من هوية الأشخاص، والمعاملات والكيانات، والبيانات المشفرة ونخلق قيمة للبرمجيات – بحيث نمكّن عملاءنا من تقديم خدمات رقمية آمنة لمليارات الأفراد والأشياء.

لدينا أكثر من 15,000 موظف يعملون انطلاقاً من 112 مكتباً، و43 مركزاً للتخصيص والبيانات، و30 مركز أبحاث وبرمجيات في 48 دولة.

للمزيد من المعلومات، قم بزيارة www.gemalto.com، أو تابعنا على تويتر عبر @gemalto.

 مسؤولو الاتصالات الإعلامية في جيمالتو:

 توري كوكس

أمريكا الشمالية
3916 257 512 1+
tauri.cox@gemalto.com

صوفي دومبريس
أوروبا والشرق الأوسط وأفريقيا
38 57 36 55 42 4 33+
sophie.dombres@gemalto.com

جاسلين هوانغ
منطقة آسيا والمحيط الهادئ
3005 6317 65+
jaslin.huang@gemalto.com

ا سيدانو
أمريكا اللاتينية
5521221422 52+
enriqueta.sedano@gemalto.com

لا يُعتبر نص هذا الإصدار الصحفي المُترجم صيغة رسمية بأي حال من الأحوال. النسخة الموثوقة الوحيدة هي الصادرة بلغتها الأصلية وهي الإنجليزية، وهي التي يُحتكم إليها في حال وجود اختلاف مع الترجمة.

‫انڈونیشیائی قومی آبادی و خاندانی منصوبہ بندی بورڈ (بی کے کے بی این) منصوبے بنائے گا، خاندانی منصوبہ بندی، خاندانی ترقی اور خاندانی انتظام کے پروگراموں تک رسائی تیز ہوگی

جکارتا، انڈونیشیا، یکم دسمبر 2017ء/پی آرنیوزوائر/– 14 ویں بین الاقوامی بین الوزارتی کانفرنس برائے آبادی و ترقی (آئی آئی ایم سی) 28 تا 29 نومبر، 2017ء، یوگیاکارتا، انڈونیشیا میں شروع ہوئی۔ ایشیا، افریقہ اور لاطینی امریکا کے 26 ممالک سے تقریباً 250 شرکاء آبادی، تولیدی صحت اور خاندانی منصوبہ بندی پر تجربات کے تبادلے کے […]

جکارتا، انڈونیشیا، یکم دسمبر 2017ء/پی آرنیوزوائر/–

14 ویں بین الاقوامی بین الوزارتی کانفرنس برائے آبادی و ترقی (آئی آئی ایم سی) 28 تا 29 نومبر، 2017ء، یوگیاکارتا، انڈونیشیا میں شروع ہوئی۔ ایشیا، افریقہ اور لاطینی امریکا کے 26 ممالک سے تقریباً 250 شرکاء آبادی، تولیدی صحت اور خاندانی منصوبہ بندی پر تجربات کے تبادلے کے لیے جمع ہوئے۔ نتائج میں یوگیاکارتا اعلامیہ شامل ہے: عملی قدم اٹھانے کا مطالبہ جس کا ہدف خاندانی بہبود و ترقی کو حاصل کرنے کے لیے حقوق کی بنیاد پر خاندانی منصوبہ بندی تک بہتر رسائی کو تیز کرنا ہے۔

مکمل ملٹی میڈیا اعلامیہ دیکھنے کے لیے یہاں کلک کیجیے: http://www.prnasia.com/mnr/bkkbn_20171129.shtml

یوگیاکارتا اعلامیہ آبادی میں اضافے، خاندانی منصوبہ بندی اور خاندانی ترقی کے لیے کلیدی سفارشات کی تکمیل کرتا ہے، جن میں بالغان کی تولیدی صحت کی تعلیم؛ شہری و دیہی علاقوں میں خاندانی منصوبہ بندی؛ جدت طرازی کی ترویج میں سرمایہ کاری شامل ہیں جیسا کہ پسے ہوئے طبقے کے لیے مشاورتی مراکز۔

کانفرنس کے نتائج اپریل 2018ء میں نیو یارک میں اقوام متحدہ کے 51 ویں خصوصی اجلاس میں پیش کیے جائیں گے۔

14 ویں آئی ایم سی کی میزبانی حکومت انڈونیشیا (بی کے کے بی این)، نے پی پی ڈی اور اقوام متحدہ کے فنڈ برائے آبادی (یو این ایف پی اے) نے “ماحول دوست شہر، انسانی تحرّک اور بین الاقوامی ہجرت: ایک جنوب-جنوب نقطہ نظر اور مداخلت کی ضروریات” تھا۔ تقریب کا افتتاح وزارت انسانی ترقی و ثقافتی امور کی شریک وزیر پوان مہارانی نے کیا۔

تقریب کے دوران تمام وفود نے ملانگریجو، این گیمپلاک ضلع، یوگیاکارتا میں کامپونگ کے بی کا دورہ کیا تاکہ انڈونیشیا میں خاندانی منصوبہ بندی کے نفاذ کو دیکھیں۔ کامپونگ کے بی بی کے کے بی این کی جانب سے شروع کیا گیا ایک پروگرام تاکہ وہ انڈونیشیا میں دور دراز علاقوں میں ترتیب دیا جا سکے، صحت کی خدمات، تعلیم اور زندگی گزارنے کے سلیقے تک باآسانی رسائی کو یقینی بنائے۔

2016ء میں شروع کیا گیا کامپونگ کے بی خواتین کو بچوں کو پالنے کی اچھی معلومات، تخلیقی صلاحیتوں کو مستحکم کرنے اور گھریلو دستکاری کی فراہمی کا شعور دیتا ہے جو انہیں خود انتظامی اور خاندانی بہبود کی طرف رہنمائی دیتا ہے۔ وفود نےنوجوانوں کے لیے معلومات و مشاورت کے مرکز (پی آئی کے-آر) کا دورہ کیا، جو اراکین کے لیے شادی میں تاخیر، زندگی کی مہارتوں اور صنفی برابری پر معلومات کی شیئرنگ کےسیشنزکرتا ہے۔

15 سالوں میں خاندانی منصوبہ بندی کا پروگرام انڈونیشیا میں ثمر آور آبادی میں بڑا اضافہ کرے گا۔ موجودہ انحصار کا تناسب <50 ہے اور 2028ء سے 2031ء کے درمیان یہ مسلسل گھٹتا ہوا اپنی کم ترین شرح 47 تک پہنچ جائے گا۔ یہ انڈونیشیا کی آبادی کے معیار زندگی کو بہتر بنانے کا سنہرا موقع ہوگا۔، ایچ نوفریجل پرنسپل سیکریٹری بی کے کے بی این نے کہا۔

رابطہ برائے ذرائع ابلاغ:
فابیولا ٹی
قومی آبادی و خاندانی منصوبہ بندی بورڈ
فون: 7169-8400-812-62+
ای میل: fabiolatazrina@yahoo.com

‫16 ویں ایشین میراتھون چیمپیئن شپس کا چین کے ڈونگ گوان میں آغاز

ڈونگ گوان، چین، 27 نومبر 2017ء/سن ہوا-ایشیانیٹ/– 26 نومبر کو 16 ویں ایشین میراتھون چیمپیئن شپس اور ڈونگ گوان انٹرنیشنل میراتھون 2017ء ڈونگ گوان، چین میں شروع ہوئی۔ اس دوڑ میلے نے 18 ممالک اور خطوں سے تعلق رکھنے والے 40 پروفیشنل ایتھلیٹس اور 30,000 دوڑنے والوں کی توجہ اپنی جانب مبذول کروائی۔ بھارت کے […]

ڈونگ گوان، چین، 27 نومبر 2017ء/سن ہوا-ایشیانیٹ/–

26 نومبر کو 16 ویں ایشین میراتھون چیمپیئن شپس اور ڈونگ گوان انٹرنیشنل میراتھون 2017ء ڈونگ گوان، چین میں شروع ہوئی۔ اس دوڑ میلے نے 18 ممالک اور خطوں سے تعلق رکھنے والے 40 پروفیشنل ایتھلیٹس اور 30,000 دوڑنے والوں کی توجہ اپنی جانب مبذول کروائی۔ بھارت کے گوپی تھوناکل اور شمالی کوریا کی کم ہائی گیونگ نے بالترتیب مردوں اور عورتوں کی میراتھون چیمپیئن شپس جیتیں۔ چیمپیئن شپس کی میزبانی کرکے ڈونگ گوان کو ایک متحرک اور دلکش شہر کی حیثیت سے دنیا کی توجہ حاصل کرنے کا موقع ملا۔

26 نومبر کی صبح 7:30 پر ڈاکٹر طالب ف الساء، نائب صدر ایشین ایتھلیٹس ایسوسی ایشن (اے اے اے)، مارس آر نکولس، سیکریٹری جنرل اے اے اے اور لو یی شینگ، سیکریٹری ڈونگ گوان میونسپل پارٹی کمیٹی کی جانب سے شاٹ کے ساتھ ہی مقابلے کا آغاز ہوا۔ یہ مقابلہ چار حصوں پر مشتمل تھا، جن میں فل میراتھون (42.195 کلومیٹر)، ہاف میراتھون (21.0975 کلومیٹر)، منی میراتھون (5.2 کلومیٹر) اور کارنیول جوائے رن (2.6 کلومیٹر) پر مشتمل تھا۔

یہ بات تسلیم شدہ ہے کہ ایشین میراتھون چیمپیئن شپس ایشیا میں میراتھون روڈ رننگ میں سب سے اعلیٰ سطح کے بین الاقوامی مقابلے کی نمائندگی کرتی ہیں۔ ڈونگ گوان تیسرا چینی شہر ہے جو بیجنگ اور ہانگ کانگ کے بعد اس مقابلے کی میزبانی کر رہا ہے۔ یہ کھیل سب کے لیے کی طرف داری کرنے والے کی حیثیت سے اپنی شہرت کو صحیح ثابت کر رہا ہے، جس کے ساتھ ساتھ یہ انٹیلی جنٹ مینوفیکچرنگ اور تاریخی ثقافت کے لیے بھی عالمی سطح پر جانا مانا شہر ہے۔ شہری ترقی کے راستے پر گامزن ڈونگ گوان سبز ترقی کے وژن کو طویل عرصے سے نافذ کیے ہوئے ہے۔ شہری ماحول کو بہتر بنانے میں کامیابیوں اور بہتر سافٹ پاور نے مقامی افراد کو حقیقی ثمرات سمیٹنے کا موقع دیا ہے۔ بہت سے دیگر اہم بین الاقوامی کھیلوں کے مواقع کی میزبانی کے پیچھے ایسی ہی وجوہات ہیں۔

2019ء میں ایشین میراتھون چیمپیئن شپس ایک مرتبہ پھر ڈونگ گوان میں ہوگی، جو دنیا بھر سے مشہور دوڑنے والوں کو بلائے گا۔ اور شہر اسی سال شریک میزبان کی حیثیت سے فیبا باسکٹ بال ورلڈ کپ کی میزبانی بھی کرے گا۔ “بڑی تقریبات ایک شہر کو مضبوط کرتی ہیں” کے خیال کو تسلیم کرتے ہوئے ڈونگ گوان 2015ء سے بی ڈبلیو ایف سڈرمین کپ، 2016ء سونگ شان لیک انٹرنیشنل میراتھون اور اب 16 ویں ایشین میراتھون چیمپیئن شپس اور ڈونگ گوان انٹرنیشنل میراتھون کی میزبانی کر چکا ہے۔ یہ عظیم تقریبات ڈونگ گوان کو ایک متحرک اور مسحور کن شہر بنانا جاری رکھیں گی جو ایک فخریہ کھیلوں کو چاہنے والی عوام رکھتا ہے۔

ذریعہ: انتظامی کمیٹی برائے 16 ویں ایشین میراتھون چیمپیئن شپس

سیاؤشان، چین: ایک ابھرتی ہوئی کاؤنٹی معیشت سے بین الاقوامی شہری ضلع تک

ہانگچو، چین، 22 نومبر 2017ء/پی آرنیوزوائر/– 18 نومبر 2017ء کو مشرقی چین کے سب سے زیادہ ترقی یافتہ شہری اضلاع میں سے ایک ہانگچو شہر کے سیاؤشان ضلع میں ایک خصوصی “خاندانی اجتماع” ہوا۔ 800 سیاؤشان افراد، جو ملک اور دنیا بھر میں مختلف شعبہ جات کی ممتاز شخصیات ہیں، پہلی بار سیاؤشان ضلعی حکومت […]

ہانگچو، چین، 22 نومبر 2017ء/پی آرنیوزوائر/–

18 نومبر 2017ء کو مشرقی چین کے سب سے زیادہ ترقی یافتہ شہری اضلاع میں سے ایک ہانگچو شہر کے سیاؤشان ضلع میں ایک خصوصی “خاندانی اجتماع” ہوا۔ 800 سیاؤشان افراد، جو ملک اور دنیا بھر میں مختلف شعبہ جات کی ممتاز شخصیات ہیں، پہلی بار سیاؤشان ضلعی حکومت کے مطالبے پر دوبارہ ملاپ کے لیے گھر واپس آئے۔

تقریباً 40 سال کی ترقی کے بعد سیاؤشان، جو کاروباری منتظمین اور اصلاح پسندوں کے شہر کے طور پر معروف ہے، چین میں ٹاؤن شپ معیشت کی مستحکم کارکردگی کے ساتھ ایک معروف کاؤنٹی معیشت سے آج ایک روایتی بین الاقوامی شہری ضلع میں تبدیل ہو چکا ہے۔

سیاؤشان چین کے دریائے چیانتانگ کے جنوبی کنارے پر واقع ہے۔ یہ جدید ضلع جی20 ہانگچو اجلاس کے مرکزی مقام کا میزبان ہے۔ یہ اپنی اقتصادی ترقی کی وجہ سے معروف ہے اور بارہا چین میں سرمایہ کاری کے لیے بہترین مقام قرار دیا جا چکا ہے۔ اصلاحات اور چین کے کھلنے کے بعد سے سیاؤشان کے افراد نے چین کی نجی معیشت کو پروان چڑھانے میں ایک معجزہ تخلیق کیا۔

لو گوانچیو، جو حال ہی میں وفات پا گئے ہیں، سیاؤشان سے تھے۔ انہیں چین کے نجی ملکیت کے اداروں کا “گاڈفادر” مانا جاتا ہے۔ 1970ء کی دہائی کے اوائل میں انہوں نے وانگ سیانگ گروپ کی بنیاد رکھی اور چین میں پہلا او ای ایم بنایا جس نے جنرل موٹرز گاڑیوں کے پرزہ جات اور جزو فراہم کیے۔ اس کے امریکی ماتحت ادارے نے 26 امریکی ریاستوں میں درجنوں کاروبار کھولے اور امریکا میں 8,000 سے زیادہ ملازمتیں تخلیق کیں۔ ریاست الینوائے نے ریاست کے لیے چینی ادارے کے حصے کو تسلیم کرتے ہوئے ہر سال 12 اگست کو “وانگ سیانگ دن” قرار دیا ہے۔

1986ء میں کیمیکل کمپنی کے طور پر قیام سے چوان ہوا گروپ ایک معروف اور متنوع جدید نجی ادارے میں تشکیل ہونا شروع ہوا۔

حالیہ سالوں میں سیاؤشان، چین کا “اقتصادی پہلوان”، “شہر کی تبدیلی کے ذریعے ایک آل راؤنڈ معیشت اور سماجی تبدیلی کو تحریک دینے” کے مشن کو سہارا دے رہا ہے۔

مقامی حکومت اس حقیقت کا ادراک کرتی ہے کہ جدت طرازی ترقی کا نمبر ایک محرّک ہے۔

سیاؤشان اکنامک اینڈ ٹیکنالوجیکل ڈیولپمنٹ زون میں واقع ہانگچو بے انفارمیشن پورٹ سیاؤشان میں انٹرنیٹ صنعت کے لیے ایک اہم “انکیوبیشن” پلیٹ فارم ہے۔ یہاں چین کے 30 سے زیادہ معروف انٹرنیٹ ادارے جمع ہوئے اور یہ سیاؤشان کے لیے ایک اہم محرک بن چکا ہے کہ ایک ساخت گری کے علاقے کو انفارمیشن معاشی علاقے میں آگے کی جانب اہم قدم اٹھائے۔

اس وقت سیاؤشان کی نئی صنعتی تشکیل، جس میں انٹیلی جینٹ مینوفیکچرنگ مرکزی حیثیت رکھتی ہے، صورت گری کررہی ہے۔ چین کا پہلا بگ ڈیٹاالائنس اور پہلی صنعتی بگ ڈیٹا لیبارٹری سیاؤشان میں قائم ہوئی۔ علی بابا اور نیٹ ایز جیسے انٹرنیٹ کے عظیم ادارے، ساتھ ساتھ معروف اے آئی اداروں نے بھی یہاں قیام کا انتخاب کیا۔

جی20 ہانگچو اجلاس کا مرکزی مقام سیاؤشان میں واقع ہانگچو انٹرنیشنل ایکسپو سینٹر ہے۔ جس علاقے میں یہ واقع ہے — اولمپک اسپورٹس ایکسپو سٹی 2022ء ہانگچو ایشین گیمز کی بھی میزبانی کرے گا۔

اعداد و شمار کے مطابق 25 ستمبر 2016ء سے جب یہ مرکز کھولا گیا، یہ 1,800 سے زیادہ کانفرنسوں اور 37 نمائشوں کی میزبانی کرچکا ہے جس کا کل نمائشی رقبہ 3.5 ملین مربع میٹر سے زیادہ ہے۔ اس کا جی20 اجلاس ایکسپیریئنس ہال کا ایک ملین مرتبہ دورہ کیا جاچکا ہے۔

بین الاقوامی کانفرنس منتظمین کی جانب سےسراہے گئے ہانگچو انٹرنیشنل ایکسپو سینٹر نے 2017ء میں آئی سی سی اے (انٹرنیشنل کانگریس اینڈ کنونشن ایسوسی ایشن) میں کامیابی سے شمولیت اختیار کی اور یو آئی اے (یونین آف انٹرنیشنل ایسوسی ایشن) کا چین سے واحد رکن بنا۔ مستقبل میں مزید بین الاقوامی میلے، کانفرنسیں اور ثقافتی تقریبات ہوں گی۔

یہ امر مسلّمہ ہے کہ سیاؤشان چین کے سب سے زیادہ متحرک نمائشی شہر اور کنونشن اور نمائش کے لیے دنیا کے معروف مقام میں تبدیل ہوگا۔ اندازہ ہے کہ 2019ء تک کل نمائشی آمدنی 15 ارب یوآن (2.3 ارب امریکی ڈالرز) تک پہنچے گی اور 1,000 سے زیادہ نمائشیں ہوں گی۔ پیشن گوئی کی جا سکتی ہے کہ سیاؤشان اس طرح ایک نئی صنعت کو بنائے گا – اعلیٰ ترین نمائش۔

جی20 ہانگچو اجلاس کے بعد سیاؤشان ہانگچو کو دنیا سے منسلک کرنے والا اہم شہری ضلع بن چکا ہے۔ مستقبل میں یہ ضلع کنونشن اور نمائش کی صنعت کو پوری قوت سے تعمیر کرے گا اور تمام تر کوششیں “ایگزی بیشن+” کے تصور پر مبنی چین کے بین الاقوامی شہر کی تعمیر کے لیے کی جائے گی۔

چین کی اعلی  ترین جامعہ کی جدت طرازی بین الاقوامی کیمپس کاآغاز

ہانگچو، چین، 20 نومبر 2017ء/سنہوا-ایشیانیٹ 21 اکتوبر 2017ء کو زی جیانگ یونیورسٹی انٹرنیشنل کیمپس کا باضابطہ آغاز ہوا۔ تقریباً ایک سال قبل امریکن اکیڈمی آف انجینیئرنگ کے فیلو پروفیسر فلپ ٹی کرین چین میں زی جیانگ یونیورسٹی (زیڈ جے یو) آئے تھے۔ “مشرقی کیمبرج” کی شہرت رکھنے والی اس جامعہ میں انہوں نے زی جیانگ […]

ہانگچو، چین، 20 نومبر 2017ء/سنہوا-ایشیانیٹ

21 اکتوبر 2017ء کو زی جیانگ یونیورسٹی انٹرنیشنل کیمپس کا باضابطہ آغاز ہوا۔ تقریباً ایک سال قبل امریکن اکیڈمی آف انجینیئرنگ کے فیلو پروفیسر فلپ ٹی کرین چین میں زی جیانگ یونیورسٹی (زیڈ جے یو) آئے تھے۔ “مشرقی کیمبرج” کی شہرت رکھنے والی اس جامعہ میں انہوں نے زی جیانگ یونیورسٹی/یونیورسٹی آف الینوائے اربانا-شیمپین انسٹیٹیوٹ (زیڈ جے یو-یو آئی یو سی انسٹیٹیوٹ) کے کل وقتی ڈین کا نیا خطاب حاصل کیا۔

مشترکہ ادارہ زیڈ جے یو کے ہائننگ انٹرنیشنل کیمپس میں قائم کیا گیا تھا۔ بین الاقوامی تعلیم کے نئے نمونے کی حیثیت سے انسٹیٹیوٹ یو آئی یو سی ، اور زیڈ جے یو کے اتنے  اعلی نصاب تعلیم اور وسائل کے ذریعے عالمی معیار کی انجینئرنگ تعلیم فراہم کر ےگا۔ دریائے یانگزے کے ڈیلٹائی خطے کے مرکزی علاقے میں خلیج ہانگچو میں واقع انٹرنیشنل کیمپس تقریباً80 ہیکٹر رقبے پر پھیلا ہوا ہے، زیڈ جے یو-امپیریئل جوائنٹ لیب فار اپلائیڈ ڈیٹا سائنس اور زیڈ جے یو-یو او ای (یونیورسٹی آف ایڈنبرا) انسٹیٹیوٹ قائم ہے۔ خلیج ہانگچو کے علاقے کو اقتصادی جدّت طرازی کا محرّک بنانے کے چینی حکومت کی پرعزم منصوبہ بندی کے ساتھ، یا سان فرانسسکو خلیج کے علاقے کے چینی ورژن کی تیاری کے لیے، اس نئے زیڈ جے یو کیمپس کی طرف کافی توجہ دی گئی ہے۔

“انٹرنیشنل کیمپس کی تعمیر زی جیانگ یونیورسٹی کو بین الاقوامی سطح پر ایک اور کامیابی ہے۔ پروفیسر سونگ یونگ ہوا، ایگزیکٹو نائب صدر زیڈ جے یو اور بانی ڈین انٹرنیشنل کیمپس نے کہا۔ بین الاقوامی حیثیت کے کرنے والے اسکول چلانے کی مشق کے کئی سالوں کے بعد زیڈ جے یو نے 2013ء میں ایک 4ایس گلوبل اسٹریٹجی”  بنائي جو ممتاز اور موثر ہے، جنہیں “تزویراتی”، “جوہری”، “تحفظ پذیر” اور “خدمت رخی” کے نام دیے گئے۔ چین میں نئے قاعدے کی بنیاد پر، ‘4جی گلوبل اسٹریٹجی’ زیڈ جے یو کی بین الاقوامیت کے لیے نظری و عملی ڈھانچہ قائم کرتی ہے، جبکہ عالمی معیار کی موجودہ جامعات کی اچھی مشقوں کو بھی ترتیب دے رہی ہے۔” سونگ نے کہا۔

زیڈ جے یو بین الاقوامیت کی سمت اختیار کرنے والی چین کی سرفہرست جامعات میں شامل ہے۔ حالیہ چند سالوں میں “سائنس اور تعلیم کے ذریعے ملک کی تجدید” اور “باصلاحیت افراد کے ساتھ ملک کو مضبوط کرنے” کی قومی حکمت عملیوں کے نفاذ کے ساتھ، چین کی اعلیٰ تعلیم نےآزادی اور ترقی کے نئے نمونے کو ظاہر کیا اور “ڈبل فرسٹ کلاس انیشی ایٹو” کے ذریعے تازہ ترین حکومتی مدد کے ساتھ عالمی اعلیٰ تعلیم میں مر کز  کی  جانب گامزن ہے۔

چین بیرون ملکی تعلیم کے لیے طلبہ کی بڑی تعداد برآمد کررہا ہے، جبکہ زیادہ سے زیادہ غیر ملکی طالب علم چینی اداروں میں درجہ سوم کی تعلیم کے خواہشمند ہیں، جو انسانی وسائل کی ترقی میں بین الاقوامیت کی زیادہ بلند سطح کی جانب رہنمائی کررہی ہے۔ 2016ء بیرون ملک تعلیم حاصل کرنے والے چینی طالب علموں کی تعداد 545,000 تک پہنچی، جو 180 ممالک اور خطوں کا احاطہ کر رہے ہیں اور چین غیر ملکی طلبہ کے سب سے بڑے برآمد کنندہ کی حیثیت اختیار کرگیا۔ اسی سال 443,000 غیر ملکی تعلیم چین میں علم حاصل کر رہے تھے، جو اسے ایشیا میں نمبر ایک مقام بنا رہے ہیں۔ مزید برآں، چین غیر ملکی باصلاحیت افراد کے لیے ایک مضبوط “مقناطیسی اثر”  ظاہر کر رہا ہے، جو 1949ء میں عوامی جمہوریہ چین کے قیام کے بعد بیرون ملک تعلیم حاصل کرکے وطن لوٹنے والے چینی طالب علموں کی سب سے بڑی لہر کو ظاہرکررہا ہے۔ 2016ء کے اختتام تک چین واپس لوٹنے والے طالب علموں کی کل تعداد 2.65 ملین سے بڑھ چکی تھی۔

1897ء میں قائم ہونے والا زیڈ جے یو چینیوں کی جانب  سے قائم کردہ اعلیٰ تعلیم کے اوّلین جدید اداروں میں سے ایک ہے۔ 120 سال کی ترقی سے یہ چین میں سرفہرست جامعات میں سے ایک بن چکا ہے۔ اسینشل سائنس انڈیکیٹر (ای ایس آئی) کی جانب سے جاری کردہ اعدادوشمار کے مطابق، نومبر 2017ء میں، زیڈ جے یو 18 شعبوں میں سرفہرست 1 فیصد میں شمار ہوتی ہے اور 5 شعبوں میں عالمی تعلیمی اداروں میں سرفہرست 50 میں شامل تھی، جو اسے چین کے دیگر اداروں  جن کی کارکر دگی ي بہترین ہے۔

چینی و بین الاقوامی جامعات کے ساتھ مزید تعاون کے ذریعے چین اپنے تعلیمی نظام کو بین الاقوامی شراکت داروں کے ساتھ اکٹھا کر رہا ہے۔ 2016ءکے اختتام تک چین 188 ممالک اور خطوں کے ساتھ تعلیمی تعاون اور تبادلے کے تعلقات قائم کرچکا ہے، جس نے 46 بین الاقوامی انجمنوں کے ساتھ تعلیمی تعاون اور تبادلہ  کیا، اور 47 ممالک اور خطوں کے ساتھ تعلیمی اسناد کی باہمی تسلیم شدگی کے معاہدے کیے۔ 2,480 چین-بین الاقوامی تعاون- سے چلنے والے ادارے اور منصوبے موجود ہیں جن کی منظوری وزارت تعلیم، چین دے چکی ہے۔

ستمبر 2017ء کے تک زیڈ جے یو پانچ براعظموں کے 34 ممالک کی 170 جامعات یا تعلیمی اداروں کے ساتھ مختلف سطح کے تعاون کرچکی ہے۔ 2016ء میں 4,800 سے زیادہ طلبہ نے بین الاقوامی تبادلے میں حصہ لیا اور 3,400 سے زیادہ ڈگری طلبہ اس کی کیمپس کی جانب متوجہ ہوئے۔

چینی جامعات کی بین الاقوامیت پر تبصرہ کرتے ہوئے پروفیسر کرین نے کہا کہ عالمگیریت کے پس منظر میں انسانیت کو زیادہ سے زیادہ یکساں چیلنجز کا سامنا ہے؛ دریں اثناء، عالمگیریت اعلیٰ تعلیم میں ہمیں غیر معمولی مواقع بھی فراہم کرتی ہے۔ بین الثقافتی اور بین العلاقائی تعاون کے ذریعے طلبہ تحقیق و جدت طرازی کی صلاحیت کو بڑھانے کے زیادہ مواقع پائیں گے، اور مستقبل میں رہنمائی کرنے والے تخلیقی باصلاحیت افراد بنیں گے اور اقتصادی نمو اور سماجی ترقی کے لیے بہتر خدمات انجام دیں گے۔

ذریعہ: زی جیانگ یونیورسٹی (زیڈ جے یو)

تصویری منسلکات کے روابط:

http://asianetnews.net/view-attachment?attach-id=301208